Chitral Times

21st August 2017

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

اوناوچ یارخون میں گلیشئر پھٹنے سے دریائے یارخون ڈیم بن گیا ,سڑک زیر آب , فوری امداد کی اپیل

June 28, 2017 at 2:27 pm

مستوج ( نمائندہ چترال ٹائمز ) مستوج کے بالائی علاقہ اُناوج یارخون میں گلشیر کے پھٹنے سے نالے میں آنے والے طغیانی نے تباہی مچا دی ہے ۔ اور ایک ہزار فٹ سے زیادہ ائریے میں سڑک کٹاؤ کا شکار ہوکر دریا برد ہونے سے یارخون بروغل روڈ مکمل طور پر بلاک ہوگیا ہے ۔ جس سے یارخون اور بروغل کی طویل وادی کے لوگ محصور ہوکر رہ گئے ہیں ۔ سابق یوسی ناظم یارخون محمد وزیر نے چترال ٹائمز کو بتایا کہ اناوچ گلیشئر پھٹنے سے ملبہ نے دریائے یارخون کا راستہ روک لیا ہے ۔ جس سے دریا عطا آباد ڈیم کی شکل اختیار کرگیاہے۔ اور اشپین دوبارگار یارخون ویلی کا تقریبا ایک کلومیٹر کاعلاقہ زیر اب آگیاہے ۔انھوں نے ضلعی انتظامیہ سے فوری امداد کیاپیل کرتے ہوئے کہاکہ یارخون ویلی کا تقریبا پندرہ ہزار آبادی محصورہوکر رہ گئی ہے ۔


ممبر تحصیل کونسل یارخون میر صاحب بیگ اور چیرمین ویلج کونسل میراگرام نمبر2شیر آمان نے ٹیلیفون پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے بتایا ۔ کہ نالہ اُناوج نے طغیانی کی وجہ سے دریائے یارخون کا راستہ روکا ۔ جسکے نتیجے میں دریا ڈیم کی صورت اختیا ر کرنے سے کئی ایکڑ آراضی و جنگلات اور بروغل روڈ کٹاؤ کا شکار ہوا ہے ۔ اور سڑک کا وسیع ایریا مکمل طور پر ختم ہوچکا ہے ۔ انہوں نے کہا ہے ۔ کہ علاقے میں ایمرجنسی صورت حال ہے ۔ کیونکہ متاثرہ سڑک سے آگے بروغل کی وادی تک کے تمام گرین گوداموں میں گندم کی شدید قلت ہ
ے ۔ انہوں نے کہا ۔ وادی میں انتہائی تشویش پائی جاتی ہے ۔ اور قحط کی وجہ سے جانی نقصان کا اندیشہ ہے ۔ شیر آمان نے کہا ۔ کہ ہم نے ان حالات کی نزاکت کو بھانپتے ہوئے بار بار محکمہ فوڈ سے گندم سٹاک کرنے کا مطالبہ کیا ۔ لیکن اُن کی ایک نہ سُنی گئی ۔ یوں اب علاقے کے لوگوں اُن حالات سے دوچار ہونا پڑا ہے ۔ جس کے بارے میں ہم متعلقہ ادارے کو آگاہ کر چکے تھے ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ سڑک کے کٹاؤ سے وہی صورت حال بنی ہے ۔ جو 2015میں کوراغ کے مقام سڑک دریا برد ہونے سے لوگوں کو مشکلات سے گزرنا پڑا تھا ۔ انہوں نے چیرمین ڈی ڈی ایم اے چترال و ڈپٹی کمشنر چترال شہاب حامد یوسفزئی سے مطالبہ کیا ہے ۔ کہ علاقے میں خوراک پہنچانے کیلئے فوری انتظام کیا جائے ۔ نیز متاثرہ سڑک کی بحالی کیلئے اقدامات اُٹھا کر یارخون اور بروغل کے لوگوں کو سنگین حالات سے نکالنے کی کوشش کی جائے ۔بصورت دیگر طویل یار خون اور بروغل وادی میں قحط کی وجہ سے ہلاتیں ہونے کا امکان ہے ۔

Translate »
error: Content is protected !!