Chitral Times

23rd August 2017

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

پلاسٹک اشیاء کی درآمد ، بنانے ، فروخت اور رکھنے پر سخت پابندی عائد

June 24, 2017 at 4:01 am

پشاور ( چترال ٹائمز رپورٹ )خیبر پختونخوا حکومت نے صوبے میں غیر تحلیل ہونے والی پلاسٹک مصنوعات پر عائد پابندی کو موثر بنانے کے لئے رولز تشکیل دے دئیے ہیں جن کے نفاذ کے ساتھ ہی صوبہ بھر میں غیرتحلیل شدہnon bio degradableپلاسٹک اشیاء کی درآمد ،بنانے،فروخت اور رکھنے پر سخت پابندی عائد ہو گئی ہے۔اب صوبے میں صرف تحلیل ہونے والے پلاسٹک bio degradableہی کی اجازت ہوگی۔ قانون کی پاسداری نہ کرنے والوں کو سزا دی جائیگی۔اس امر کا اعلان محکمہ ماحولیات نے ایک سرکاری اعلان میں کیا جس کے مطابق غیر تحلیل ہونے والی پلاسٹک اشیاء سے ماحولیات پر بہت برا اثر پڑ رہا ہے چنانچہ پابندی کے اعلان کے بعد اب اس حوالہ سے رولز تشکیل دے دئیے گئے ہیں جو فی الفور نافذ العمل ہوں گے۔رولز کے نفاذ کے ساتھ صوبہ بھر میں غیرتحلیل شدہ مواد سے تیار ہونے والی پلاسٹک مصنوعات پر پابندی عائد ہو گئی ہے اب نہ تو یہ مصنوعات تیار ہو سکیں گی نہ ہی ان کی تقسیم،خرید و فروخت اور درآمد کی اجازت ہوگی جبکہ اس حوالے سے ماضی میں جاری شدہ تمام اجازت نامے بھی منسوخ تصور ہوں گے۔رولز کے تحت اب یہ کاروبار بغیر رجسٹریشن کے نہیں ہو سکے گا جبکہ تمام منصوعات پراوکسوبائیو ڈی گریڈ یبل تحریر کرنا لازمی ہوگا واضح رہے کہ وزیر اعلیٰ پرویز خٹک نے اس مسئلے سے نمٹنے کے لئے شوکت یوسفزئی کی سربراہی میں کمیٹی بنائی تھی جس میں لوکل گورنمنٹ،ماحولیات اور محکمہ قانون کے سیکرٹریز،کمشنرپشاور،ڈی جی ماحولیات، چیمبر صدر اور تاجروں کے نمائندے شامل تھے۔ کمیٹی نے کئی ماہ تک جائزہ لینے کے بعد قانون سازی کی سفارش کی جب قانون سازی ہو گئی تو کمیٹی نے تجویز کیا کہ غیر تحلیل شدہ پلاسٹک اشیاء پر پابندی عائد کی جائے اس کی وزیر اعلیٰ پرویز خٹک نے اپریل میں منظوری دے دی اور اب اس حوالہ سے رولز بھی بنا دئیے گئے ہیں جن کے بعد تمام ڈپٹی کمشنرز بازاروں میں جاکر سمپل اکٹھاکریں گے ماحولیات ڈیپارٹمنٹ نے ٹیسٹنگ لیبارٹری کی مشینری درآمد کر لی ہے لوگوں کو تربیت بھی دے دی گئی ہے جو بھی کارخانہ اب پلاسٹک بنائے گا وہ اس پر اپنالوگو ضرور لگائے گا تاکہ پتہ چل سکے کہ بنانے والا کون ہے۔

Translate »
error: Content is protected !!