Chitral Times

22nd August 2017

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

چترال مستوج شندور روڈ پر کام بجٹ کے بعد شروع کیا جائیگا۔ تورکہو روڈ کیلئے 100ملین روپے جاری ۔ایم این اے شہزادہ افتخارالدین

May 8, 2017 at 10:15 am

چترال (نمائندہ چترال ٹائمز)چترا ل شندور روڈکے منصوبے کی 147 کلو میٹر سڑک وفاقی ادارے نیشنل ہائی وے اتھارٹی (NHA) کے حوالے کی جاری ہے اور بجٹ کے بعد منصوبے پر کام شروع ہو جائے گا۔جبکہ سروے کا کام اخری مراحل میں ہے ۔ یہ بات شہزادہ افتخارا لدین ایم این اے چترال ٹائمز سے ٹیلی فونک گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ انھوں نے بتایا کہ صوبائی حکومت پہلے مستوج شندور روڈ کے 74کلومیٹر حصے کو خود ہی تعمیر کرنا چاہتی تھی مگر بعد میں این ایچ اے کو حولگی پر رضامند ہوگئی ہے ۔ اور متعدد میٹنگوں کے بعد این ایچ اے حکام نے چترال سے شندور تک 147کلومیٹر سڑک کی سروے کا کام شروع کیا ہے ۔جس میں سنوغر کا پل بھی شامل کیا گیا ہے۔ اب سروے کا کام مکمل ہونے والا ہے۔

جبکہ وزیر اعظم نے اس روڈ کو سی پیک کا متبادل روڈ بھی ڈیکلئیر کیا ہے ۔ بجٹ کے بعد اس روڈ کے ساتھ گرم چشمہ اور کالاش ویلیز روڈز پر بھی کام شروع کیا جائیگا۔ شہزادہ افتخار نے بتایا کہ انکی درخواست پر وزیر اعظم نے تریچ لوٹ اویر ٹرک ایبل روڈ کو بجٹ 2017-18میں شامل کرنے کیلئے ڈائریکٹیوز جاری کردیا ہے ۔اور ساتھ شاگروم تریچ تا لوٹ اویر روڈ کو بھی آئندہ کے بجٹ میں شامل کیا جائیگا۔ اور ان تمام سڑکوں کو این ایچ اے کے زریعے تعمیر کئے جائیں گے۔

ایم این اے شہزادہ افتخار نے مذید بتایا کہ تورکہو روڈ کیلئے 100ملین روپے سی اینڈ ڈبلیو کے اکاونٹ میں منتقل کردئیے گئے ہیں۔اور مذید 260ملین روپے کا ڈیمانڈ پلاننگ کمیشن کو دی گئی ہے ۔ جبکہ سو ملین روپے دسمبر کے مہینے ریلیز ہوچکے تھے۔ انھوں نے مذید بتایا کہ ایکسین سی اینڈ ڈبلیو چترال کو ہدایت دی گئی ہیں کہ وہ جلد از جلد تورکہور وڈ پر تعمیراتی کام دوبارہ شروع کروائیں گئے۔ شہزادہ افتخار الدین نے انتہائی افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ صوبائی حکومت وفاقی حکومت کے منصوبو ں کو مختلف بہانوں سے طول دے رہی ہے ۔ جسکی وجہ سے فنڈز لیپس ہونے کا خدشہ ہے ۔ انھوں نے صوبائی حکومت کے ذمہ داروں سے اپیل کرتے ہوئے کہا ہے کہ وفاقی حکومت کے منصوبوں پر کام کو تیز کیا جائے جبکہ عدم دلچسپی کی بنا پرنقصان عوام کو ہی پہنچے گا۔ شہزادہ افتخار الدین نے تورکہو کے عوام پر زور دیتے ہوئے کہا کہ وہ اس منصوبے کو اپنا سمجھ کر ہر کوئی اسکی بروقت تکمیل کیلئے اپنے حصے کا کردار ادا کریں۔ اور پارٹی پالیٹکس سے بالا تر ہوکر علاقے کی ترقی کیلئے کام کریں۔

Translate »
error: Content is protected !!